مجھ سے پہلی سی محبت

مارچ 15, 2007

میں نے سمجھا کہ تو ہے تو درخشاں ہے حیات

تیرا غم ہے تو غم رہر کا جھگڑا کیا ہے

تیری صورت سے ہے عالم میں بہاروں کو ثبات

تیری آنکھوں کے سوا عالم میں رکھا کیا ہے

تو جو مل جائے تقدیر نگوں ہو جائے

یوں نہ تھا، فقط میں نے چاہا تھا یوں ہو جائے

اور بھی دکھ ہیں زمانے میں محبت کے سوا

راحتیں اور بھی ہیں وصل کی راحت کے سوا
ان گنت صدیوں کے تاریخ بہیمانہ طلسم

ریشم و اطلس و کمخواب میں بنوائے ہوئے

لوٹ جاتی ہے ادھر کو بھی نظر کیا کیجئے

اب بھی دلکش ہے تیرا حسن، مگر کیا کیجئے

مجھ سے پہلی سی محبت مری محبوب نہ مانگ
فیض احمد فیض

! طبيب ڪجھ تہ تپاسي ڏس تون

مارچ 15, 2007

!طبيب

ڪجھ تہ تپاسي ڏس تون

ڇو ڀلا ماٺ جي وحشت ۾

.دل ٿي گھٻرائي

ڇو ڀلا ڦٽ نراسائي جو ڇٽي ئي نٿو

سانت جي چئو طرف سرڻين

وبا آ ڦھلائي

ھي ڪھڙا درد

جن جو

سلسلو کٽي ئي نٿو

ڇو ڀلا وقت جي منصور جي چپن تي وري

.ڪينسر مصلحتن جي اڀري آ

چون ٿا

.سچ جي گوري بہ ڏاڍي اگري آ

ڇو ڀلا

سانت جي ھن شھر ۾ ھلندي ھلندي

منھنجي جذبن جو ساھ گھٽجي ٿو

منھنجي شعرن منھنجي گيتن

منھنجي سپنن جو ساھ گھٽجي ٿو

منھنجي نگري

ء منھنجي ڌرتي جي

.ساھوارن جو ساھ گھٽجي ٿو

! طبيب ڪجھ تہ تپاسي ڏس تون

آڪاش انصاري

مليں

مارچ 15, 2007

اب کے ہم بچھڑے تو شايد کبھي خوابوں ميں مليں

جس طرح  سوکھے ہوئے  پھول  کتابوں ميں مليں

ڈھونڈ   اجڑے  ہوئے  لوگوں  ميں  وفا  کے موتي

يہ  خزانے  تجھے  ممکن  ہے  خرابوں  ميں مليں

غم   دنيا      بھي    غم  يار  ميں     شامل   کر  لو

نشہ   برپا  ہے   شرابيں  جو   شرابوں  ميں  مليں

تو   خدا   ہے     نہ  ميرا  عشق     فرشتوں  جيسا

دونوں انساں ہيں   تو کيوں اتنے  حجابوں ميں مليں

آج    ہم   دار  پہ   کھينچے  گئے   جن   باتوں   پر

کيا  عجب  کل  وہ  زمانے  کو  نصابوں  ميں  مليں

اب نہ وہ ميں ہوں نہ تو ہے نہ وہ ماضي ہے فراز

جيسے   دو  سائے   تمنا  کے  سرابوں  ميں  ملیں

فراز

جواب شڪوہ

مارچ 15, 2007

آج بھی ہو جو براہیم کا ایماں پیدا
آگ کرسکتی ہے انداز گلستاں پیدا

اقبال